کب دل میں ہے آرزو تری۔ غزل

Ghazal Logo

منظور حسین طُور

کب سے دل میں ہے آرزو تری
کتنی پیار ہے گفتگو تیری

روز خوابوں میں پاس ہوتی ہے
شکل ہوتی ہے ہو بہ ہو تری

ترے آنے سے پھیل جاتی ہے
خوشبو آتی ہے چار سو تری

تجھ کو جان سے عزیز رکھتا ہوں
خود سے پیاری ہے آبرو تری

منظور بڑے ادب سے لفظوں میں
یاد لکھتا ہوں با وضو تری

Loading Facebook Comments ...